لیاقت پور : تیزگام ایکسپریس میں آتشزدگی، 75افراد جاں بحق

رحیم یارخان: لیاقت پور کے قریب گیس سلینڈر پھٹنے کےباعث تیزگام ایکسپریس کی 3 بوگیوں میں آگ لگ گئی۔ حادثے میں ابتدائی طور پر71 افراد کے جاں بحق ہونےکی تصدیق ہوچکی ہے جبکہ 46 افرادکے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں جن میں سے بیشتر کی حالت تشویشناک ہے۔متاثرہ تینوں بوگیوں میں 207 افراد سوارتھے۔

ابتدائی تفصیلات کے مطابق کراچی سےرولپنڈی کیلئے نکلنےوالی تیزگام ایکسپریس میں حادثہ گیس سلینڈرپھٹنے کے بعد پیش آیا۔

ڈی پی او رحیم یارخان امیر تیمور خان کے مطابق جائےحادثہ سے71 افراد کی لاشیں نکالی جاچکی ہیں جبکہ مزید ہلاکتوں کا خدشہ ہے۔

ڈی پی او نے بتایاکہ حادثے میں زخمی ہونے والے افراد کو ٹی ایچ کیو اسپتال منتقل کیاجارہاہے۔

بول نیوز کوموصول ہونے والی تفصیلات کے مطابق ریسکیو ٹیموں نے جائے حادثہ پر آگ پر قابوپالیا ہے۔

محکمہ ریلوےکا موقف

محکمہ ریلوے نےموقف دیتے ہوئے کہا کہ ٹرین میں آگ سلینڈر پھٹنےسے لگی۔ متاثرہ تینوں بوگیوں میں 207 افراد سوارتھے۔ جن میں سے ایک بوگی میں 78 ، دوسری میں 77 اور بزنس کلاس کی بوگی میں 54 افراد کی بکنگ تھی، حادثے کے بعد بوگیوں سے کئی افراد کی جلی ہوئی لاشیں نکالی گئی ہیں جن میں سے کئی لاشوں کے ٹکڑے ملے ہیں۔

محکمہ ریلوے کا کہناہے کہ حادثے میں جاں بحق ہونےوالے14افراد کی لاشوں کی شناخت ہوگئی جبکہ 28کی لاشیں ناقابل شناخت ہیں۔

ملتان کےنشتراسپتال کےبرن وارڈمیں ایمرجنسی نافذکردی گئی جبکہ اسپتال میں موجودبستروں کی تعداد اورعملےمیں اضافہ کردیاگیا۔

پاک فوج کےجوان جائے حادثےپرموجود، ریسکیوسرگرمیاں جاری

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق پاک فوج کےجوان تیزگام ٹرین حادثےکےمقام پر پہنچ گئےہیں اورسول انتظامیہ کے ساتھ مل کر امدادی کارروائیوں میں حصہ لے رہے ہیں۔

آئی ایس پی آر کاکہناہےکہ پاک فوج کے ڈاکٹرز اورپیرا میڈیکل اسٹاف بھی امدادی کارروائیوں میں مصروف ہیں۔ آرمی ایویشن کےہیلی کاپٹر بھی ملتان سے جائے حادثہ روانہ ہوگئے۔

آئی ایس پی آر کاکہناہے کہ آرمی ہیلی کاپٹر کے ذریعے زخمیوں کو اسپتال منتقل کیاجائے گا۔

محکمہ ریلوےکا موقف

سی ای او ریلوے اعجاز احمد نےموقف دیتے ہوئے کہا کہ متاثرہ تینوں بوگیوں میں 207 افراد سوارتھے۔ ٹرین میں آگ سلینڈر پھٹنےسے لگی۔

ذرائع ریلوے کا کہناہے کہ حادثے میں جاں بحق ہونےوالے14افراد کی لاشوں کی شناخت ہوگئی جبکہ 28کی لاشیں ناقابل شناخت ہیں۔

عینی شاہدین کا موقف

عینی شاہدین کے مطابق سلینڈر پھٹنےسےآگ لگنےکاتاثرغلط ہے۔آگ پنکھے میں شارٹ سرکٹ کے باعث لگی۔

شیخ رشیدنےواقعےکوانسانی غلطی اورکوتاہی قراردےدیا

وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید احمدنے لیاقت پور ٹرین حادثے میں جاں بحق و زخمی ہو نے والے افراد کی مالی امداد کا اعلان کیا ہے۔

وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ بطور وزیر ریلوے سانحہ رحیم یا ر خان کی ذمہ داری قبول کرتا ہوں، مگر یہ واقعہ انسانی غلطی اور کوتاہی کا نتیجہ ہے۔

ذرائع کے مطا بق وزیر ریلوے کا کہنا ہےکہ ٹرین میں سلنڈر لے کر جانا ریلوے انتظامیہ کی کوتاہی تھی، جس اسٹیشن سے متاثرہ افراد سوار ہوئے تھے، وہاں کی انتظامیہ سے تحقیقات کی جائیں گی،شیخ رشید احمد نے جاں بحق افراد کے لواحقین کو پندرہ لاکھ روپے اور زخمیوں کو تین سے پانچ لاکھ روپے امداد کا اعلان کیا ہے۔

شیخ رشید نے کہنا ہے کہ ٹرینوں میں کھانا بنانے پر پابندی ہوتی ہے، ریلوے قوانین پر سختی سے عملدرآمد کرانے کی ضرورت ہے، گاڑی میں آگ گیس کا چولہا پھٹنے سے لگی، آگ نے تین بوگیوں کو اپنی لپیٹ میں لیا، امدادی کارروائیاں جاری ہیں، جلد ٹریک کھول دیں گے۔

وزیر ریلوے کے مطابق تبلیغی جماعت کے کچھ افراد سلنڈر پر ناشتہ بنا رہے تھے، آگ بجھا دی گئی ہے، مسافروں کو لیاقت پور پہنچا دیا گیا، آگ 3، 4 ،5 نمبر بوگی میں لگی، متاثرہ بوگیوں میں رائیونڈ تبلیغی اجتماع پر جانے والے افراد سوار تھے۔

وزیراعظم کاحادثےکی تحقیقات کاحکم

 وزیراعظم عمران خان نے ٹرین حادثے پر گہرے رنج وغم کااظہارکرتے ہوئے جاں بحق اور زخمی ہونے والے افراد کے لواحقین  سے تعزیت کا اظہار کیا ہے۔

وزیراعظم کی جانب سے حادثےکی ہنگامی بنیادوں پرتحقیقات کروانےکاحکم بھی جاری کردیاگیا۔

تیزگام کو پیش آنے والے المناک حادثے پر دل نہایت رنجیدہ ہے۔ میری تمام ہمدردیاں غم میں ڈوبے خاندانوں کیساتھ ہیں اور میں زخمیوں کی جلد شفایابی کیلئے دعاگو ہوں۔ اس کے ساتھ حادثے کی فوری تحقیقات ہنگامی بنیادوں پر مکمل کرنے کے احکامات بھی صادر کرچکا ہوں۔